Swat

پی کے 8 سوات، میدان 16 امیدواروں کے درمیان سجے گا

(باخبر سوات ڈاٹ کام)سوات کی صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی کے 8 میں اس بار عام انتخابات کے لئے 16 امیدواروں کے درمیان مقابلہ ہوگا۔ اس حلقہ سے تحریکِ انصاف سے تعلق رکھنے والے تین آزاد امیدوار مدِ مقابل ہیں، جن میں حمید الرحمان، سابق ایم پی اے حاجی فضل مولا اور سابق وفاقی وزیر مراد سعید کے والدسعید اللہ شامل ہیں۔ اے این پی سے افتخار احمد، ن لیگ سے حاجی جلات، پیپلز پارٹی سے اختر علی، جماعت اسلامی سے رحمت علی اور تحریک انصاف پارلیمنٹرین کے عبدالغفورکے درمیان مقابلہ ہوگا۔ اس حلقہ میں کل رجسٹرڈ ووٹوں کی تعداد 209308 ہے جن میں 113467 مرد اور 95841 خواتین وو ٹر شامل ہیں۔ 8 فروری کے انتخابات کے لئے اس حلقہ میں 138 پولنگ سٹیشن اور464 پولنگ بوتھ بنائیں جائیں گے۔ 2018ء کے انتخابات میں اس حلقہ سے تحریک انصاف کے ڈاکٹر امجد علی نے19461 ووٹ حاصل کرکے کامیابی حاصل کی تھی۔ دوسرے نمبر پر اے این پی کے وقار خان نے 13681 ووٹ لیا۔ تیسرے نمبر پر جماعت اسلامی کے حسین احمد کانجو نے7314 ووٹ حاصل کیا تھا۔ ان انتخابات میں ڈاکٹر امجد علی نے پی کے 7 اور 8 دونوں سے کامیابی حاصل کی تھی جنہوں نے پھر پی کے 8 سے استعفا دیا۔ پھر ضمنی انتخابات میں اے این پی کے وقار خان نے کامیابی حاصل کی۔ وقار خان کے انتقال پر اس حلقے میں پھر ہونے والے ضمنی انتخابات میں تحریک انصاف کے فضل مولا نے کامیابی حاصل کی۔ 2013ء کے انتخابات میں اس حلقے سے تحریکِ انصاف کے ڈاکٹر امجد علی نے15086 ووٹ حاصل کرکے کامیابی حاصل کی تھی۔ دوسرے نمبر پر اے این پی کے وقار خان نے 9050 اور تیسرے نمبر پر مسلم لیگ کے امیر مقام نے 7932 ووٹ حاصل کیا تھا۔ 2008ء کے انتخابات میں اس حلقہ سے اے این پی کے وقار خان نے 7174 ووٹ حاصل کرکے کامیابی حاصل کی تھی۔ دوسرے نمبر پر جے یو آئی کے مولانا سید عرفان اللہ نے3958 اور تیسرے نمبر پر ق لیگ کے اجمیر شاہ نے3212 ووٹ حاصل کیا تھا۔ 2002ء کے انتخابات میں اس حلقے سے ایم ایم اے کے مولانا سید عرفان اللہ نے10915 ووٹ حاصل کرکے کامیابی حاصل کی تھی۔ دوسرے نمبر پر اے این پی کے وقار خان نے7359 اور تیسرے نمبر پر ق لیگ کے سید محمد علی شاہ باچا لا لا نے4523 ووٹ حاصل کیا تھا۔ اس حلقہ میں تحصیلِ کبل کے بیشتر علاقے شامل ہیں۔

متعلقہ خبریں

تبصرہ کریں